صرف نیوز ہی نہیں حقیقی ویوز بھی

این سی پی (اجیت)نےآئیڈولوجی سے کوئی سمجھوتہ نہیں کیا،صرف بی جے پی حکومت کی حمایت کی ۔،

187,420

این سی پی (اجیت)نےآئیڈولوجی سے کوئی سمجھوتہ نہیں کیا،صرف بی جے پی حکومت کی حمایت کی ۔

اقلیتی فرقہ سے ناانصافی نہیں ہوگی ،انتخابی منشورجاری کرتے ہوئے اجیت پوار کا دعویٰ نیشنلسٹ کانگریس پارٹی (این سی پی_اجیت) نے آج یہاں جنوبی ممبئی کے وانکھیے اسٹیڈیم کے گروارے کلب میں منعقدہ ایک تقریب میں لوک سبھا انتخابات کے لیے انتخابی منشور جاری کرتے ہوئے نائب وزاعلی اور سربراہ اجیت پوار نے کہاکہ این سی پی نے اپنی آئیڈولوجی سے کوئی سمجھوتہ نہیں کیا،بلکہ ملک اور خصوصی طور پر مہاراشٹر کی ترقی اور بہتری کے لیے صرف بی جے پی حکومت کی حمایت کی۔اقلیتی فرقے سے کوئی ناانصافی نہیں ہوگی۔اس موقع پر نائب وزیر اعلیٰ اجیت پوار، قومی کارگزار صدر ایم پی پرفل پٹیل، ریاستی صدر ایم پی سنیل تٹکرے، سینئر لیڈر اور فوڈ اینڈ سیول سپلائیز کے وزیر چھگن بھجبل، میڈیکل ایجوکیشن کے وزیر حسن مشرف، ریلیف اور بازآبادکاری کے وزیر انل پاٹل، وزیر زراعت دھننجے منڈے، خواتین و چائلڈ ڈیولپمنٹ کے وزیر ادیتیتائی تاٹکرے، اسمبلی کے نائب اسپیکر نارہاری جروال، سابق ایم ایل اے بابا صدیقی،اقلہتی شعبہ کے چیئرمین وغیرہ مچ چوجود تھے۔این سی پی کے ریاستی صدر ایم پی سنیل تٹکرے نے کانگریس لیڈر اور سابق ایم ایل سی مشتاق انتولے کے پارٹی میں شامل ہونے کا اعلان کیا ۔اجیت پوار نے "راشٹریہ وادی پارٹی راشٹرکے لیے” کانعرہ لگاتے ہوئے اور شیوسینا ادھو ٹھاکرے پر شدید نکتہ چینی کی اور کہاکہ ہم سب کا ساتھ ،سب کاوکاس کی مودی حکومت کی پالیسی کی حمایت کرتے ہیں،لیکن ہم اپنی آئیڈولوجی سے کوئی سمجھوتہ نہیں کریں گے۔انہوں نے یقین دلایا کہ اقلیتوں اور خصوصاً مسلمانوں کی فلاح و بہبود اورمختلف شعبوں اور تعلیمی میدان میں ترقی کے لیے ہرممکن تعاون کریں گے۔انہوں نے کہاکہ این سی پی ریاست میں سماجی انصاف ،اقلیتیو دیگر پسماندہ طبقات اور مسلمانوں کے لیے اہم اقدامات کرے گی۔

اجیت پوار کے مطابق ہم یہ سب ذات پات، فرقہ بندی، مذہب، تفریق سے بالاتر ہو کر "انسانیت” کے طور پر کرے گی اور جینے کا حق اور مساوت ان کی پارٹی کی س وچ ہے۔ پارٹی مساوات، بھائی چارہ اور اتحاد پر یقین رکھتی ہے۔اجیت پوار نے انتخابی منشور کا حوالہ دیتے ہوئے کہاکہ این سی پی سانے گرو جی کی سوچ پر یقین رکھتی ہے کہ "محبت کاپیغام ہی کھرا دھرم ہے۔اور اس کے ذرعہ دنیا کو پیار پیش کرنا چاہئے”۔ سماج کے پسماندہ اور بہوجن طبقے کو سماج کے مرکزی دھارے میں لانا ہمارا فرض ہے۔ ہم اس بات پر زور دیتے رہیں گے کہ ذات کے لحاظ سے مردم شماری کرائی جائے۔انہوں نے کہاکہ قومی سطح پر مولانا آزاد ریسرچ اینڈ ٹریننگ انسٹی ٹیوٹ کے لیے ہماری کوششیں جاری رہیں گی۔ اس ادارے کے ذریعے ہم فنڈز فراہم کریں گے اور اقدامات پر عمل درآمد کریں گے تاکہ اقلیتی برادریوں کے طلباء کو اعلیٰ تعلیم، صنعت اور روزگار کے مواقع مل سکیں۔اور اس پرثابت قدم رہیں گے۔ انہوں نے وعدہ کیاکہ ہم اردو میڈیم اسکولوں کے تعلیمی معیار کو بلند کرنے کے لیے "سیمی انگلش” اسکولوں کا درجہ بحال کرنے کی کوششیں جاری رکھیں گے۔جبکہ عازمین حج کے لیے خدمات اور سہولیات کی جامع پالیسی پر اصرار کیا جائے گاانتخابی منشور میں اقلیتی لڑکیوں کے لیے تعلیم اور روزگار کے مواقع فراہم کرناہماری ترجیح ہو گی۔ ہم اس کے لیے مرکز کی خصوصی اقتصادی پالیسی بنانے کی کوشش جاری رکھیں گے۔اس سے قبل قومی کارگزار صدر پرفل پٹیل نے خطاب کرتے ہوئے کہاکہ ہم اس بات کو یقینی بنانے پر توجہ مرکوز کریں گے کہ بیرون ملک ملازمت اور ملازمت کے لیے خاص طور پر خلیجی ممالک میں جانے والے شہریوں کے لیے حفاظتی اقدامات کیے جائیں۔

جبکہبہم صنعتیں لگانے کے لیے درج فہرست ذاتوں اور درج فہرست قبائل کے زمرے کے نوجوانوں کے لیے خصوصی تعلیم،تربیتی نظام قائم کرنے کی کوشش کریں گے۔ثاس ضمن میں درج فہرست ذاتوں، درج فہرست قبائل کے تعلیمی اداروں کے لیے انجینئرنگ اور میڈیکل کالج شروع کرنے کی پالیسی بنانے کی کوشش جاری رکھیں گے۔منشور کے مطابق این سی پی مہاراشٹر کے خطوط پر مرکزی سطح پر او بی سی فلاحی اسکیموں کے نفاذ کے لیے ایک الگ وزارت قائم کرنے کی کوشش کرے گی۔اس کی وجہ سے بڑی تعداد میں لوگ ساتھ آرہے ہیں، جس کا مطلب ہے کہ اجیت دادا نے جو اہم فیصلہ لیا ہے وہ سیکولر سوچ سے بالکل متاثر نہیں ہے۔ کانگریس کے سینئر لیڈر اور سابق ایم ایل اے مشتاق انتولے نے آج ممبئی کے ممبئی کرکٹ ایسوسی کے لاؤنج میں باضابطہ طور پر نیشنلسٹ کانگریس پارٹی میں شمولیت اختیار کی۔ اس موقع پرسنیل تٹکرے نے یقین ظاہر کیا کہ مشتاق انتولے رائے گڑھ لوک سبھا حلقہ میں گھوم رہے ہوں گے لیکن اگر یہ معلوم ہو جائے کہ وہ اجیت پوار کے ساتھ پورے مہاراشٹر میں گھوم رہے ہیں تو سیاست میں لمحہ فکریہ ضرور بدل جائے گا۔انہونے کہاکہ ایسا ماحول بنایا جا رہا ہے کہ اقلیتی طبقہ ہماری پارٹی سے ناراض ہے۔ لیکن سنیل ت چچٹکرے نے کہا کہ پارٹی شیو – شاہو – پھولے – امبیڈکر کے نظریات کو وراثت میں لے کر کام کر رہی ہے۔انہوں نے مطلع کیاکہ مہاراشٹر میں پہلی بارمسلمان ریاستی وزیر اعلی کا عہدہ آر انتولے کواندراگاندھی نے عہدہ سونپا۔ ملک میں پہلی بار 7 کروڑ روپے کی قرض معافی انتولے نے کی تھی۔

اس کے علاوہ ایم ایل اے کو مستقل رہائش گاہیں دی گئیں۔ اس موقع پر سنیل تاٹکرے نے تجربہ بھی بتایا کہ مہاراشٹر نے انتولے کی انگوٹھی والی قیادت کو دیکھا کیونکہ بیرسٹر انتولے نے ایم ایل اے کا پروٹوکول کیا اور اس وقت ایم ایل اے کی پوزیشن کو مضبوط کیا۔اس موقع پر نائب وزیر اعلیٰ اجیت دادا پوار، قومی کارگزار صدر ایم پی پرفل پٹیل، ریاستی صدر ایم پی سنیل تٹکرے، سینئر لیڈر اور فوڈ اینڈ سیول سپلائیز کے وزیر چھگن بھجبل، میڈیکل ایجوکیشن کے وزیر حسن مشرف، ریلیف اور بازآبادکاری کے وزیر انل پاٹل، وزیر زراعت دھننجے منڈے، خواتین و چائلڈ ڈیولپمنٹ کے وزیر ادیتیتائی تاٹکرے، اسمبلی کے نائب اسپیکر نارہاری جروال، ریاستی جنرل سکریٹری شیواجی راؤ گرجے،خواتین کی علاقائی صدر روپلیتائی چاکنکر، ممبئی ڈویژنل صدر سمیر بھجبل، وائی بی ترویدی، چیف ترجمان امیش پاٹل، یوتھ ریجنل صدر سورج چوہان، بابا صدیقی، علاقائی نائب صدر پرمود ہندو راؤ، علاقائی ترجمان سنجے تٹکرے، علاقائی ترجمان پراجیکٹ جنرل سکریٹری پراجپبلا اور دیگر نے شرکت کی۔ ، ممبئی ورکنگ صدر نریندر رانے وغیرہ موجود تھے۔

Leave A Reply

Your email address will not be published.