صرف نیوز ہی نہیں حقیقی ویوز بھی

اسرائیلی فوجی میدان چھوڑ کر بھاگنے لگے، کرائے کے فوجیوں کی تلاش، ہندوستان سے مذاکرا ت جاری

88,756

غزہ سٹی – تل ابیب: غزہ میں صیہونی فوجی میدان جنگ چھوڑ کر بھاگنے لگے۔ فوجیوں کی جانیں بچانے کے لیے اسرائیل نے اپنی فوج میں کرائے کے فوجی بھرتی کرنے شروع کر دیئے ہیں_

اسپینی اخبار کا اپنی رپورٹ میں کہنا ہے کہ غزہ میں جنگ کیلئے اسرائیل نے فرانس کے کرائے کے پرائیوٹ فوجی بھرتی کر لیے ہیں۔ کرائے کے فوجیوں کو ماہانہ 12 ہزار ڈالر دئیے جائیں گے۔اخبار کے مطابق اسرائیل دیگر ممالک سے بھی پرائیوٹ فوجیوں کو بھرتی کرے گا۔ پرائیویٹ فوجیوں کی بھرتی کا مقصد غزہ میں تصادم کے باعث اسرائیلی فوجیوں کے جانی نقصان سے بچنا ہے۔واضح رہے کہ زمینی کارروائی کے دوران حماس کے حملوں میں اب تک 30 سے زائد اسرائیلی فوجی ہلاک ہو چکے ہیں جبکہ اس متعدد ٹینک اور فوجی گاڑیاں بھی تباہ کر دی گئی ہیں۔

اسرائیل حماس جنگ کے درمیان اسرائیل نے غزہ کے شہریوں کو اپنے ملک میں کام کرنے کے اجازت نامے دینے پر پابندی لگا دی ہے۔ اسرائیل کی تعمیراتی صنعت نے حکومت سے 90 ہزار فلسطینیوں کی جگہ 1 لاکھ ہندوستانی کارکنان کو بھرتی کرنے کی اجازت مانگی ہے۔اسرائیل بلڈرز ایسوسی ایشن کے نائب صدر ہیم فیگلن نے مغربی کنارے میں وائس آف امریکہ کی ایک رپورٹ میں کہا کہ ہم اس وقت ہندوستان کے ساتھ بات چیت کر رہے ہیں۔

ہم اسرائیلی حکومت کی جانب سے ہماری تجاویز کی منظوری کا انتظار کر رہے ہیں۔ ہمیں امید ہے کہ وہ چلائے گی۔اسرائیل آسانی سے، ہندوستان سے 50 ہزار سے ایک لاکھ کارکنان کو لانے کی ضرورت ہے۔ اس سال مئی میں اسرائیل نے ہندوستان کے ساتھ ایک معاہدہ کیا تھا جس کے تحت 42 ہزار ہندوستانیوں کو اسرائیل میں کام کرنے کی اجازت دی گئی تھی۔رپورٹ کے مطابق 25 فیصد فلسطینی اسرائیل کے تعمیراتی شعبے میں کام کرتے ہیں۔

اس میں 10 فیصد کارکن غزہ کے علاقے سے آتے ہیں۔ہیم فیگلن نے کہا، “ہم ایک جنگ کے بیچ میں پھنس گئے ہیں اور فلسطینی تعمیراتی شعبے میں 25 فیصد حصہ ڈالتے ہیں۔ جنگ کے آغاز سے ہی انہیں ملک میں کام کرنے کی اجازت نہیں دی گئی ہے۔”غزہ کے لوگ غربت اور بے بسی کی زندگی گزار رہے ہیں۔ جنگ سے پہلے غزہ کے 18 ہزار شہریوں کو اسرائیل میں چھوٹی موٹی نوکریاں کرنے کی اجازت تھی۔ غزہ میں بے روزگاری کی شرح 50 فیصد ہے۔ غزہ کے لوگ اسرائیل میں کام کرنے کا اجازت نامہ حاصل کرنے کے لیے بہت جدوجہد کرتے ہیں۔اسرائیل کی طرف سے غزہ کے شہریوں کو دیے گئے اجازت ناموں کے بارے میں خیال کیا جاتا تھا کہ اس سے غزہ میں غربت اور بے بسی کی صورتحال میں کچھ استحکام آیا ہے۔ پرمٹ منسوخ ہونے کے بعد غزہ کے لوگ مشکلات کا شکار ہیں۔

Leave A Reply

Your email address will not be published.