صرف نیوز ہی نہیں حقیقی ویوز بھی

مولانا کلیم صدیقی کی ضمانت منسوخ کرنے سے متعلق اترپردیش حکومت کی درخواست کی سماعت سپریم کورٹ میں ملتوی

68,581

نئی دہلی: سپریم کورٹ نے منگل کو اتر پردیش حکومت کی درخواست پر سماعت ملتوی کر دی جس میں عالم دین مولانا کلیم صدیقی کو دی گئی ضمانت کو منسوخ کرنے کی درخواست کی گئی تھی، جن پر اترپردیش اے ٹی ایس نے مبینہ طور پر بڑے پیمانے پر مذہبی تبدیلی کا ریاکٹ چلانے کا الزام لگایا ہے۔

جسٹس انیرودھا بوس، سنجے کمار اور ایس وی این بھٹی پر مشتمل بنچ نے اتر پردیش حکومت کی طرف سے پیش کردہ ایک مکتوب کے ذریعے سماعت کو ملتوی کرنے کی درخواست کو قبول کیا۔پچھلی سماعت میں، سپریم کورٹ نے ایڈیشنل ایڈوکیٹ جنرل گریما پرشاد سے 5 ستمبر تک مبینہ اجتماعی مذہبی تبدیلی کیس میں مولانا کلیم صدیقی سے منسوب کردار کو واضح طور پر بیان کرنے کے لیے ٹیبلر بیان داخل کرنے کی ہدایت دی تھی

پچھلے ہفتے، سپریم کورٹ نے مولانا کلیم صدیقی کو اپنے بھائی علیم صدیقی کی تدفین میں شرکت کرنے کے لیے اتر پردیش کے مظفر نگر میں اپنے آبائی گاؤں جانے کے لیے ایک وقت کی نرمی دی تھی۔5 اپریل کو ہائی کورٹ کے جسٹس عطاالرحمن مسعودی اور سروج یادو کی ڈویژن بنچ نے صدیقی کی ضمانت پر رہائی کی ہدایت دی، جنہیں 100 سے زیادہ لوگوں کو مذہب تبدیل کرنے کے الزام میں میرٹھ سے گرفتار کیا گیا تھا۔

ہائی کورٹ نے برابری کی بنیاد پر انھیں ضمانت دی کیونکہ شریک ملزموں میں سے ایک کو سپریم کورٹ نے ضمانت دی تھی۔ریاستی اے ٹی ایس نے دعویٰ کیا تھا کہ وہ ملک بھر میں تبدیلی مذہب کا سب سے بڑا سنڈیکیٹ چلاتے تھے اور ان کے ذریعہ چلائے جانے والے ایک ٹرسٹ میں ‘حوالہ’ کے ذریعے عطیات بھی برآمد کیے گئے تھے۔

Leave A Reply

Your email address will not be published.