صرف نیوز ہی نہیں حقیقی ویوز بھی

ریاستی کابینہ کا ۲۸؍ جون سے آرائش گیسو کی دکانیں کھولنے کا فیصلہ

45,448

ممبئی: ریاستی کابینہ کے اجلاس میں سیلون شروع کرنے کا ایک اہم فیصلہ لیا گیا ہے جو کرونا وائرس کی وجہ سے لاک ڈاؤن کے دوران بند کردیئے گئے تھے۔ ریاستی حکومت نے آئندہ اتوار سے یعنی 28 جون سے ریاست میں سیلون شروع کرنے کی مشروط اجازت دے دی ہے۔ ریاست میں کرونا کی وجہ سے لاک ڈاؤن کے دوران تمام معاشی و کاروباری لین دین کو بند کردیا گیا تھا۔ مگر انلاک کے پہلے مرحلے میں حکومت نے تمام لین دین کو آہستہ آہستہ ہموار کرنے کی کوششیں شروع کردی ہیں۔ سیلون اسی ہفتے سے شروع ہو جائے گا اور بیوٹی پارلر اور جم شروع کرنے کا فیصلہ بہت جلد ہی لیا جا ئے گا اس طرح کی اطلاع ممبئی کے نگراں وزیر اسلم شیخ نے دی ہے ۔
ریاستی حکومت نے سیلون کاروبار شروع کرنے کے لئے کچھ اصول و ضوابط طے کیے ہیں۔ یعنی سیلون میں صرف بال کٹوانے کی اجازت ہے۔ مونڈھنے کی اجازت نہیں ہے۔ نیز سیلون میں کام کرنے والے اور صارف دونوں کے لئے ماسک لازمی ہے۔ اسی طرح کرونا انفیکشن پھیلنے نہ پائے اس کے لئے ضروری اقدامات لازمی قرار دی گئی ہے ۔
لاک ڈاؤن کے پانچویں مرحلے میں ، حکومت نے کچھ قواعد میں نرمی کی تھی۔ کچھ کاروبار کو شرائط و ضوابط پر شروع کرنے کی اجازت تھی۔ مگر حکومت نے اس بنیاد پر سیلون کے کاروبار کو اجازت دینے سے انکار کردیا تھا کہ کرونا انفیکشن اس سے اور بڑھ سکتا ہے ۔ مسلسل لاک ڈائون کی وجہ سے اس پیشے سے منسلک افراد اب فاقہ کشی کا شکار ہو رہے ہیں ۔ لاک ڈاؤن کی وجہ سے ہونے والے مالی بحران کی وجہ سے ریاست میں اب تک سیلون کے پانچ افراد خودکشی کر چکے ہیں۔جس کے لئے نابھک سماج کے سومناتھ کاشد نے ریاستی حکومت کو ذمہ دار ٹہرایا تھا ۔
ریاست میں دوسرے کاروبار کی اجازت ہے ، وہاں سیلون کاروبار کی اجازت کیوں نہیں ہےاس طرح کا سوال نابھک سماج اورسیلون پیشہ افراد نے حکومت سے کیا تھا۔اس تعلق سے نابھک سماج اور سیلون پیشہ افراد ہائی کورٹ میں پٹیشن دائر کرنے کی تیاری کر رہے تھے کیونکہ حکومت مثبت اقدام نہیں اٹھا رہی تھی ۔

Leave A Reply

Your email address will not be published.