صرف نیوز ہی نہیں حقیقی ویوز بھی

ممبئی میں مغلائی کھانوں کے لئے ڈھابوں کا چلن عروج پر، 1600 سے زائد مغلائی کھانے

56,899

ممبئی : یوں تو ممبئی کے متعدد جگہوں پر مغلائی کھانوں کے لئے ہوٹل موجود ہیں لیکن ان دنوں ممبئی سے متصل علاقوں میں موجود ڈھابوں کا چلن بہت زیادہ ہے۔ ممبئی اور ممبئی سے متصل علاقوں میں کھانے کے شائقین گھوڑ بندر روڈ وسئی ویرار علاقے میں موجود ڈھابوں کا رخ کر رہے ہیں ہفتے کے تین دنوں میں ان ڈھابوں میں تِل رکھنے کو جگہ نہیں رہتی  کیونکہ یہاں لوگ اپنے اہل خانہ کے ساتھ نہ صرف مغلائی کھانوں کا لطف اٹھانے آتے ہیں بلکہ ایک الگ ماحول سے بھی محظوظ ہیں ۔ ہم نے ممبئی کے اس علاقے کا جائزہ لیا اور یہاں موجود ڈھابے اور اسمیں موجود پکوان جو لوگوں کی توجہ کا مرکز ہیں انکے بارے میں جاننے کی کوشش کی آخر کیا وجہ ہے ممبئی جیسی نائٹ لائف کو چھوڑ کر کھانے کے شائقین یہاں کا رخ کر رہے ہیں۔

وسئی نئے گاؤں علاقے میں  گھوڑ بندر روڈ پر وسیع و عریض علاقے میں پھیلا یہ ثنایا ڈھابہ ہے اس علاقے میں ڈھابے کی خاصی تعداد ہے لیکن اس ڈھابے کا منفرد انداز اور مغلائی کھانوں کی ذائقے نے عوام کے درمیان بہت ہی کم وقت میں اپنی ایک الگ شناخت قائم کی ہے ۔ یہاں ١٦٠٠ سے زائد قسم کے کھانے ہیں جبکہ روزمرہ کے کھانوں میں اور عام طور پر ٣٠٠ سے زائد مغلائی کھانے پسند کئے جاتے ہیں۔ یہی سبب ہے کہ لوگ اپنے اہل خانہ کے ساتھ آنے والوں کی یہاں تعداد زیادہ ہوتی ہے ۔

ممبئی سے محض ایک گھنٹے کے فاصلے پر واقع اس ڈھابے میں ثنایا تھال، نظام ثنایا تھال، یوسفی تھال، سلمونی تھال گزشتہ 4 برسوں سے کھانے کے شائقین کی توجہ کا مرکز ہیں۔ مغلائی کھانوں میں بٹیر سوپ، مٹن کالی مرچ ، چکن لیمن ڈرائیو، ممبئی کا توا، چکن کشیمری کباب، چکن پہاڑی کباب، چکن بھرا، مٹن نظامی، مٹن تندوری، مٹن ثنایا اسپیشل، مٹن تندور بنجارہ سب سے زیادہ پسند کیے جاتے ہیں ۔

ڈھابے کو ڈھابے کی طرح روپ دینے کے لئے قدیم طرز پر اسے بانس اور لکڑیوں سے بنایا گیا ہے اور اسے کئی حصوں میں تقسیم کیا گیا ہے۔ جیسا کہ اگر فیملی کے ساتھ ہیں تو پریوار ہال، اگر آپ بیچلر ہیں تو بنٹائز ہال،  اگر آپ کہیں بھی بیٹھ کر کھانے کے خواہشمند ہیں تو صورتی لالہ ہال، دسترخوان پر بیٹھ کر یا زمین پر بیٹھ کر کھانے کا شوق ہے تو نوابی ہال بنایا گیا ہے۔

اسکے علاوہ آئسکریم کے لئے یہاں پورا ایک کاؤنٹر بنایا گیا ہے جہاں انواع اقسام کی آئسکریم بنائی جاتی ہیں۔ جسکا بنانے کا ایک الگ انداز ہے۔ جہاں لوگ آئسکریم کھانے کے ساتھ ساتھ اس انداز کو دیکھنے کے لئے زیادہ پر شوق ہوتے ہیں ان کیلئے کھانے سے زیادہ آئسکریم بنانے کا انداز ان کے لئے کشش کا سبب ہوتا ہے۔

اسکے علاوہ یہا مرد و خواتین کے لئے الگ الگ عبادت گاہیں بنائی گئی ہیں جہاں آپ نماز ادا کرسکتے ہیں۔ ان سب کے درمیان سب سے اہم یہ ہے کہ اگر آپ فیملی کے ساتھ یہاں آتے ہیں تو بچوں کی تفریح کے لئے بھی انتظام ہے۔ چونکہ زیادہ تر لوگ اپنے اہل خانہ یا فیملی کے ساتھ یہاں آتے ہیں، اس لئے بچوں کی خاصی تعداد یہاں موجود رہتی ہے اسلئے ڈھابے کے ایک حصے میں بچوں کے لئے پلے ایریا مختص کیا گیا ہے، تاکہ بچے یہاں کھل کود سکیں ۔

ممبئی جیسی گنجان آبادی والے اس شہر میں مہنگے ہوٹل بہت ہیں لیکن ڈھابے کا تصور یہاں اس لئے کامیاب نہیں ہوتا کہ یہاں جگہ کی قلت ہے جبکہ ان علاقوں میں وافر اور وسیع جگہیں ہیں جہاں ڈھابے کے بارے میں کئی لوگوں نے غور کیا اور اس طرح یہاں ڈھابوں کی صورت میں کامیاب کاروبار کی ایک نئی شکل نمودار ہوئی ۔  

Leave A Reply

Your email address will not be published.