صرف نیوز ہی نہیں حقیقی ویوز بھی

مہاراشٹر:ستارہ میں اشتعال انگیز سوشل میڈیا پوسٹس کے بعد گروپ تصادم کے بعدکشیدگی ،امتناعی احکامات نافذ

68,973

ستارہ، 11 ستمبر اتوار کو بعض جارحانہ سوشل میڈیا پوسٹس کے خلاف احتجاج کے دوران یہاں پیر کو علی الصبح گروپوں میں جھڑپیں شروع ہوگئیں جب کہ پولیس نے امتناعی احکامات نافذ کیے اور انٹرنیٹ خدمات کو معطل کردیا۔حکام نے بتایاکہ پسسوالی سے تعلق رکھنے والے ایک شخص نے مبینہ طور پر سوشل میڈیا پر کچھ قابل اعتراض پوسٹس کیں جس سے لوگ مشتعل ہو گئے او پتھراؤ کے واقعات کے ساتھ گروپ میں جھڑپیں ہوئیں، جس کے نتیجے میں کل رات سے یہاں پر کشیدہ صورتحال پیدا ہوگئی۔سپرنٹنڈنٹ آف پولیس سمیر شیخ نے کہاکہ "10 ستمبر کو، ایک شخص نے سوشیل میڈیا پر پوسیوالی میں ایک جارحانہ پوسٹ پوسٹ کی۔

اس پوسٹ پر لوگوں نے ناراضگی ظاہر کی۔اس سے امن و امان کا مسئلہ پیدا ہو گیا۔ ستارہ پولیس نے فوری طور پر صورتحال پر ردعمل ظاہر کیا اور اسے قابو میں لایا،” انہوں نے کہا کہ جہاں ضرورت پڑی وہاں پولیس کی کافی نفری تعینات کی گئی ہے اور حالات اب پرامن ہیں، اور لوگوں سے ہوشیار رہنے کی اپیل کی۔سمیر شیخ نے آج ایک بیان میں اپیل کی۔کہ "لوگوں کو افواہوں پر یقین نہیں کرنا چاہیے… معاشرے میں انتشار پھیلانے والے پیغامات کو سوشل میڈیا کے ذریعے پھیلایا نہیں جانا چاہیے تاکہ امن و امان کے کسی بھی مسئلے سے بچا جا سکے۔

ہوشیار رہیں، چوکس رہیں اور اگر کوئی ناخوشگوار واقعہ نظر آئے تو فوراً حکام سے رابطہ کریں،۔” ستارہ سے نیشنلسٹ کانگریس پارٹی کے رکن پارلیمنٹ نے پسسوالی میں ہونے والے واقعات کو "انتہائی افسوسناک اور بدقسمتی” قرار دیا اور لوگوں سے اپیل کی کہ وہ تحمل کا مظاہرہ کریں اور افواہوں پر اعتبار کیے بغیر حکومت کے ساتھ تعاون کریں. انہوں نے یہ جاننے کی کوشش کی کہ اس طرح کی شرارت میں کون ملوث ہے، لوگ بغیر تصدیق پیغام کوکیوں آگے بھیج رہے ہیں اور ایسے عناصر کے خلاف کارروائی کا مطالبہ کیا۔ بھارتیہ جنتا پارٹی کے راجیہ سبھا ممبر پارلیمنٹ چھترپتی ادین راجے بھونسلے نے لوگوں سے امن برقرار رکھنے اور اس طرح کے جھوٹے پیغامات میں نہ پھنسنے کی اپیل کی ہے۔ ان واقعات کو افسوسناک قرار دیتے ہوئے، این سی پی کی ورکنگ صدر سپریہ سولے نے لوگوں سے اپیل کی کہ وہ افواہوں کا شکار ہونے سے گریز کریں، اور سماج میں ہم آہنگی برقرار رکھنے میں مدد کریں۔

Leave A Reply

Your email address will not be published.