صرف نیوز ہی نہیں حقیقی ویوز بھی

حجاب میں ملبوس کراٹے چیمپئن شاہین اختر چین میں عالمی کراٹے مقابلہ میں ریفری کے فرائض انجام دیں گی

66,186

حجاب میں ملبوس 52سالہ کراٹے استاد شاہین اختر، ، بمشکل ہی نظر آتی ہیں کہ وہ کیا ہیں،دراصل وہ کراٹے میں 4 بار کی قومی چیمپئن ہیں اور دنیا بھر کے تمام اعلی مقابلوں میں حصہ لیا اوراس بار واحدریفری مقرر کی گئی ہیں۔ چین میں جاری 19ویں ہانگژو 2022 ایشین گیمز میں خاتون ‘آفیٹنگ ریفری’۔ہوں گی۔ بین الاقوامی ٹیکنیکل آفیشل یا آفیشل ریفری کے طور پر کام کرنے کے لیے اپنا بیگ پیک کرتے ہوئے،جنوبی ممبئی میں رہائش پذیرمحترمہ شاہین کے ہونٹوں پر ایک مسکراہٹ نظرآتی ہے، لیکن بہت کم لوگوں کو علم ہے کہ وہ ایک سادہ لوح دادی ہیں جن کی بیٹی ثنا حوا اور بیٹا آیان انصاری بھی کراٹے میں قومی چیمپئن ہیں۔

انہوں نے 13 سال کی عمر میں اپنی پہلی کراٹے کِکس، اسٹینس، مکے، بلاکس اور چپس سیکھی جب کہ وہ کرائسٹ چرچ اسکول، بائیکلہ کی ایک اسکول طالبہ تھیں اور پھر ایچ آر کالج، چرچ گیٹ سے بی کام کی ڈگری حاصل کرنے کے دوران شاندار کارکردگی کا مظاہرہ کیا اور انہیں اتنا پسند کیاگیا کہ ایک ‘کراٹیکا’ کے طور پر پیشہ ورانہ کیریئرکو مکمل بنادیا گیا۔انہوں نے گزشتہ چار دہائیوں کے بعد سے، اس نے یوتھ لیگ سے پریمیئر لیگ سے ساؤتھ ایشین چیمپیئن شپ سے لے کر ایشین چیمپیئن شپ سے لے کر کامن ویلتھ چیمپیئن شپ سے لے کر عالمی چیمپیئن شپ تک عالمی سطح پر اپنا راستہ طے کیا ہے،ایک ریفری کے طور پر اپنے نظم و ضبط کے لیے تمغے اور اعزازات حاصل کیے ہیں اور ایک شریک کے طور پر قوم کے لیے اعزازات حاصل کیے ہیں۔

شاہین نے نرم لہجہ میں کہاکہ "ہانگزو میں، میں 5 سے 7 اکتوبر کے درمیان شیڈول مردوں اور خواتین کے تمام مقابلوں میں کراٹے کے تمام مقابلوں کے لیے آفیشل ریفری ہوں گا، جس میں 42 ایشیائی ممالک سے ٹاپ چیمپئنز حصہ لیں گے… یہ ایک بہت اہم ذمہ داری ہے،” باضابطہ ریفری کے طور پر اپنے آنے والے چیلنجوں پر بات کرتے ہوئے، شاہین نے کہا کہ "دباؤ کو ہینڈل کرنا” ان کی اسائنمنٹ کا سب سے اہم حصہ ہو گا – جب پورے ایشیا سے دو ارب سے زیادہ آنکھیں اس کے ہر اقدام اور فیصلے کا جائزہ لیں گی۔انہوں نے کہاکہ "تمام ممالک وہاں آ رہے ہیں اور تمغوں کے لئے کوشاں ہیں… رنگ میں تمام ممالک کے اعلی درجے کے چیمپئنز کے علاوہ، مختلف ممالک کے کھیلوں کے ماہرین، کھیلوں کے حکام، وی آئی پیز، ججز اور ناظرین اسٹیڈیم اور ان کے گھروں میں موجود ہوں گے۔ … میری طرف سے کوئی بھی غلط فیصلہ سٹیڈیم کے اندر ہی تباہی کا باعث بن سکتا ہے،‘‘ شہید نے مزید کہاکہ رنگ کے اندر، جب مختلف مدمقابل ممالک کے تمغے کے بھوکے چیمپئن ایک دوسرے سے ٹکرائیں گے، یہ تجربہ شاہین کے لیے بھی ایک اور آزمائش ہو گا، جو خود اس کھیل میں ایک مشہور اور مشہور شخصیت ہیں۔

انہوں نے کہاکہ "میرا کام رنگ میں ان حریفوں کو کنٹرول کرنا ہوگا، انہیں کھیل کے اصولوں کی پابندی کرنے اور ان پر عمل کرنے کا حکم دینا ہوگا، اگر وہ لڑکھڑاتے ہیں تو ان پر لگام لگانے کے لیے انتباہات، جرمانے وغیرہ کی سطحیں ہیں… بہت سے لوگوں کی آنکھیں گڑی ہوں گی۔” صرف شاذ و نادر مواقع پر، ماڈریٹر ‘کانسا’ (میچ سپروائزر) مداخلت کرتا ہے اور یکساں طور پر شاذ و نادر ہی ‘تھرڈ امپائر’ یا ویڈیو ریویو سپروائزر، بنیادی طور پر جب پوائنٹس کی اپیل کا سہارا لیا جاتا ہے، اس نے اپنی مہلک مٹھیوں اور بازوؤں کو موڑے بغیر تحمل سے سمجھایا۔

اپنے نئے کردار میں، سابقہ 4 بار کی قومی چیمپئن، 6 بار مہاراشٹر کی چیمپئن، 8ویں ڈگری بلیک بیلٹ ہولڈر، شاہین ملک اور جنوب میں عالمی کراٹے فیڈریشن اور ایشین کراٹے فیڈریشن کی خاتون ریفری بھی ہیں ، اب، شاہین کراٹے انڈیا آرگنائزیشن سے منسلک ساما (شاہین کی اکیڈمی آف مارشل آرٹس) کے ذریعے اگلے جنرل کو لاٹھی دے رہے ہیں، اور مستقبل کے ریاستی-قومی-بین الاقوامی چیمپئنز اور ریفریوں کو تیار کرنے کی کوشش کر رہے ہیں۔ ان کا کہناہے کہ”مجھے امید ہے کہ میرا طویل سفر نوجوان نسلوں کو کراٹے کو ایک سنجیدہ اور قابل عمل کیریئر کے آپشن کے طور پر اپنانے کی ترغیب دے گا… ہندوستان میں بے پناہ صلاحیت موجود ہے اور بہت سے نوجوان چیمپینس مناسب موقع ملنے پر اپنے شان و شوکت کے لمحات کو حاصل کرنے کے لیے پروں میں انتظار کر رہے ہوں گے۔ میں ہمیشہ کسی کی مدد کے لیے حاضر ہوں،” شاہین نے اس بات اعلان کیا۔

Leave A Reply

Your email address will not be published.