صرف نیوز ہی نہیں حقیقی ویوز بھی

اب ورون گاندھی کو بھی سارس کی فکر

438

لکھنؤ: بھارتیہ جنتا پارٹی کے پیلی بھیت کے ایم پی ورون گاندھی سارس اور عارف کی کہانی کو لے کر کافی جذباتی نظر آرہے ہیں۔ وہ عارف اور سارس کو ایک کرنے کی بات کر رہے ہیں۔ سی ایم یوگی آدتیہ ناتھ سے اس کام کو مکمل کرنے کی اپیل کر رہے ہیں۔ دراصل عارف اور سارس کی دوستی کا معاملہ گزشتہ دنوں منظر عام پر آیا تھا۔

عارف نے سارس کو پالا تھا۔ قواعد کے مطابق محکمہ جنگلات کی ٹیم نے سارس کو لے کر کانپور کے چڑیا گھر میں رکھا ہے۔ اس کے بعد سماج وادی پارٹی کے صدر اکھلیش یادو نے عارف اور سارس کے افسردہ ہونے کا معاملہ سختی سے اٹھایا۔ دو دن پہلے عارف نے سارس کو آزاد کرنے کے مطالبے کو لے کر ایس پی صدر سے بھی ملاقات کی تھی۔ اب اس معاملے میں ورون گاندھی کی انٹری ہوئی ہے۔

بی جے پی کے رکن پارلیمنٹ ورون گاندھی نے ایک ویڈیو ٹویٹ کیا ہے۔ اس میں عارف کانپور کے چڑیا گھر میں سارس سے ملنے گیا۔ ویڈیو میں عارف کو قریب ہی دیکھ کر سارس کی خوشی کو دکھایا گیا ہے۔ اپنے پنجرے میں قید سارس باہر نکلتا ہوا دکھائی دیتا ہے۔ ٹوئٹ میں ورون گاندھی نے کہا کہ سارس اور عارف کی کہانی خاص ہے۔ ایک دوسرے کو دیکھ کر ان دونوں دوستوں کی خوشی بتا رہی ہے کہ ان کی محبت کتنی پاکیزہ اور پاکیزہ ہے۔ یہ خوبصورت مخلوق پنجرے میں رہنے کے لیے نہیں بلکہ آسمان پر آزاد اڑنے کے لیے بنائی گئی ہے۔ انہوں نے سی ایم یوگی آدتیہ ناتھ سے اپیل کی کہ وہ سارس کو اس کا آسمان، اس کی آزادی اور اس کا دوست واپس کردیں۔


ورون گاندھی کی والدہ مینکا گاندھی ہمیشہ جنگلی حیات کے تحفظ کے لیے آواز اٹھاتی رہی ہیں۔ پیپل فار اینیمل تنظیم کی سربراہ اور رکن پارلیمنٹ مینکا گاندھی کا ماننا ہے کہ ماحولیاتی تحفظ اور جانوروں کا تحفظ ایک جنگ کی طرح ہے۔ سب کو اس میں حصہ لینا چاہیے۔ جانوروں اور پرندوں کو پالنے کے بجائے اس نے ہمیشہ ان کے تحفظ پر اصرار کیا ہے۔ اب ورون گاندھی کے اس بیان پر بحث شروع ہوگئی ہے۔ سوال یہ اٹھایا جا رہا ہے کہ کیا کسی کو ریاست سے محفوظ پرندہ رکھنے کا حق دیا جا سکتا ہے؟ اس معاملے میں ورون گاندھی کی انٹری نے سیاسی بحث کو مزید گرم کر دیا ہے۔

عارف اور سارس کی کہانی الگ ہے۔ دراصل امیٹھی کے رہنے والے عارف نے ایک سارس کو زخمی حالت میں پایا تھا۔ اس نے سارس کا علاج کروایا۔ میری زندگی بچالی اس کے بعد دونوں کی دوستی ہوگئی۔ یہ دوستی موضوع بحث بن گئی۔ امیٹھی گئے ایس پی صدر اکھلیش یادو بھی یہ انوکھی کہانی جان کر ملنے پہنچے۔ تصاویر سوشل میڈیا پر شیئر کیں۔ جب محکمہ جنگلات کی ٹیم کو سارس کے پالے جانے کا علم ہوا تو اس نے پرندے کو اپنی تحویل میں لے لیا۔ درحقیقت سارس کو ریاستی پرندے کا درجہ حاصل ہے۔ ایسے میں اسے پالتو بنا کر کوئی بھی قید میں نہیں رکھ سکتا۔

سارس کے پکڑے جانے اور عارف پر مقدمہ درج ہونے کے بعد، اکھلیش یادو سمیت اپوزیشن لیڈروں نے یوگی حکومت پر حملہ کیا۔ اکھلیش نے کہا کہ عارف سے ملاقات کی وجہ سے اس قسم کی کارروائی ہوئی۔ سارس کو پہلے رائے بریلی اور پھر کانپور کے چڑیا گھر میں رکھا گیا تھا۔ اس معاملے پر کافی بحث ہوئی ہے_

Leave A Reply

Your email address will not be published.