صرف نیوز ہی نہیں حقیقی ویوز بھی

جھوٹ کی سیاست نے ہمیں این ڈے چھوڑنے پر مجبور کیا : سنجے راوت

شیوسینا رکن پارلیمنٹ نے کہا کہ زراعت بل پر سبھی پارٹیوں سے مشورہ کیاجانا چاہیئے تھا

13,317

ممبئی : زراعتی بل کو لیکر اپوزیشن پارٹیوں کے ساتھ ہی سرکار کے اشتراکی پارٹی بھی ان کی مخالفت کر رہے ہیں ۔ پنجاب میں این ڈی اے کی ساتھی شیرومنی اکالی دل کی جانب سے وزیر ہرسمرت کور بادل نے گزشتہ روز زراعت بل کی مخالفت میں اپنی وزارت سے استعفی دے دیا تھا وہیں اب این ڈی اے کے سابق ساتھی شیوسینا کے لیڈر سنجے راوت نے سرکار پر نشانہ لگایا ہے ۔ سنجے راوت نے کہا کہ جو باتیں وزیر اعظم کہہ رہے ہیں اس کے باوجود اگر آپ کا وزیر استعفی دیتا ہے تو کچھ گڑبڑی ہے ۔

ایک نیوز چینل سے بات کرتے ہوئے سنجے راوت نے کہا کہ وزیر اعظم جو بات کہہ رہے ہیں اگر اس کے بعد بھی کوئی وزیر استعفی دیتا ہے تو کچھ تو بات ہے ۔ انہوں نے کہا کہ ہم نے این ڈی اے نہیں چھوڑا وہ جھوٹ کی سیاست کر رہے تھے جس کی وجہ سے ہم مجبور ہو گئے تھے ۔ ہم دونوں تو سب سے پرانے ساتھی تھے باقی تو پیئنگ گیسٹ ہیں ۔

زراعت بل پر سنجے راوت نے کہا کہ این ڈی اے کو زراعت بل پر مشورہ کرنا چاہیئے تھا اگر سبھی پارٹیوں کو چھوڑ بھی دیں تو زراعت سیکٹر سے جڑا اہم فیصلہ لیتے وقت بھی اسٹریٹیجک چرچا کرنی چاہیئے تھی جبکہ اس بل پر کوئی گفتگو ہی نہیں ہوئی ۔ سبھی لوگ کہہ رہے ہیں کہ اس سے کسانوں کو نقصان ہوگا ۔ این ڈی اے کی سابق ساتھی شیوسینا کے لیڈر سنجے راوت کا کہنا ہے کہ جو باتیں وزیر اعظم کہہ رہے ہیں اس کے باوجود اگر آپ کا وزیر استعفی دیتا ہے تو مطلب کہ کچھ تو خامی ہے ۔

سنجے راوت نے کہا کہ پہلے شیوسینا نے این ڈی اے کو چھوڑا تھا اور اب شیرومنی اکالی دل نے چھوڑا ہے انہوں نے کہا کہ ہم اور اکالی دل آج بھی ایک ساتھ ہیں ۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ ہم پر الزام تھا کہ ہم جھوٹ بول رہے تھے اب اکالی دل اگر جھوٹ بول رہا ہے تو ہریش چندر کون ہے ۔ انہوں نے کہا کہ بل کو لیکر پنجاب کے کسانوں میں ناراضگی پائی جاتی ہے اس کا مطلب یہ کہ پورے ملک کا کسان ناراض ہے ۔ انہوں نے کہا کہ پنجاب کے ساتھ مہاراشٹر ہے ۔ انہوں نے کہا کہ پنجاب کے بعد اب ہریانہ ، راجستھان ، مدھیہ پردیش ، بہار، اترپردیش اور مہاراشٹر میں بھی کسانوں کا احتجاج شروع ہوگا۔

Leave A Reply

Your email address will not be published.