صرف نیوز ہی نہیں حقیقی ویوز بھی

ماہرین کے مطابق کورونا کے علاج والی دوا ’ریمڈےسِویر‘ گردے اور جگر کے مریضوں کے لئے مہلک ثابت ہوسکتی ہے

16,396

پونے: ’ریمڈےسِویر‘ ، ایک اینٹی وائرل دوا جو کورونا کے علاج کے لئے استعمال ہوتی ہے ، یہ جگر اور گردے کے مریضوں کے لئے خطرناک ثابت ہوسکتی ہے۔ ماہرین نے گردے اور جگر کی خرابیوں میں مبتلا کورونا مریضوں پر ’ریمڈےسِویر‘ کے استعمال کے لئے انتباہ جاری کیا ہے۔ دوا کے ایمرجنسی استعمال اتھارٹی نے دواکے استعمال  کا مشورہ دینے سے پہلے مریضوں کے گردے اور جگر کی فعالیت کی تشخیص کا مطالبہ کیا ہے۔

ماہرین کا کہنا ہے کہ دائمی جگر کی بیماری والے مریضوں کو ’ریمڈےسِویر‘ کا استعمال جگر کیلئے زہریلا ہوسکتا ہے۔ اس کے ساتھ ، یہ دوا ان مریضوں کو نہیں دی جانی چاہئے جن کے گردے خراب ہیں۔ حاملہ اور دودھ پلانے والی خواتین کیلئے بھی دوا کے استعمال کے لئے انتباہ جاری کیا گیا ہے۔

روبی ہال کلینک کے ہیپاٹولوجسٹ ونیت شاہ کا کہنا ہے کہ ، "گائیڈ لائن کے مطابق ، اگر کسی کے جگر کے انزائم کی ویلیو بیس لائن اوسط سے پانچ گنا زیادہ ہے ، تو پھر ’ریمڈےسِویر‘ کا استعمال مہلک ہے۔انتہائی  نگہداشت شعبہ کے ماہر سوبھال دکشت کا کہنا ہے کہ مریض کے لواحقین مستقل طور پر ’ریمڈےسِویر‘ کے لئے درخواست کرتے ہیں ، جس سے ڈاکٹروں انتہائی دباؤ میں آجاتے ہیں۔

دکشت کا کہنا ہے کہ ، "مریض کو ’ریمڈےسِویر‘ استعمال کرنے سے پہلے جگر اور گردوں کے فنکشن ٹیسٹ کروانا ضروری ہے۔ تاہم ، مشاورت کے باوجود ، رشتہ داروں کو لگتا ہے کہ مریض کو دوائی دینے سے انکار کیا جارہا ہے۔ اس سے ہمارا کام مشکل ہوجاتا ہے۔ ہر کورونا مریض پر ’ریمڈےسِویر‘ استعمال نہیں کیا جاسکتا۔

بھارت کے ڈرگ کنٹرولر جنرل (ڈی جی سی آئی) نے کووڈ ۔19 کے علاج کے لئے تفتیشی اینٹی وائرل دوا ’ریمڈےسِویر‘ کی تیاری اور مارکیٹنگ کی منظوری دی تھی۔ یہ دوا ہندوستان میں ’کوویفر‘کے نام سے فروخت ہوتی ہے۔ یہ دوا کووڈ 19 کے علاج میں مستعمل ہے۔ اس کی زیادہ سے زیادہ خوردہ قیمت 5400 روپے ہے۔

اہم بات یہ ہے کہ حالیہ دنوں میں ، ’ریمڈےسِویر‘ کی طلب میں اضافہ ہوا ہے۔ شفایابی   بہتری کی وجہ سے کلینکل ٹرائلز میں کووڈ 19 مریضوں کیلئے اس کی طلب میں اضافہ  ہوا ہے۔ امریکہ میں مقیم گِلِیاد سائنسز ، جس کے پاس دوا کی تیاری کے مالکانہ حقوقہیں ، نے بھارت میں چار دوا ساز کمپنیوں کے ساتھ معاہدہ کیا ہے۔

Leave A Reply

Your email address will not be published.